اسرائیل آبنائے ہرمز میں امریکا کا اتحادی بننے سے باز رہے: ایران

تہران (ڈیلی اردو/نیوز ایجنسی) ایران نے اسرائیل کو آبنائے ہرمز میں امریکی مشن کا حصہ بننے سے باز رہنے کی تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ نہ ملکی سلامتی پر سودے بازی کی جائے گی اور نہ کسی کو رعایت دی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے خبردار کیا ہے کہ خلیج میں کسی بیرونی فوج کی موجودگی کو ایران کے لئے عدم تحفظ کا ذریعہ سمجھا جائےگا اور اس حوالے سے دفاعی اقدامات بھی کیے جائیں گے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک بیان میں جواد ظریف نے کہا کہ خلیج فارس ایران کے لیے ایک اہم لائف لائن ہے اور سیکیورٹی کے لحاظ سے قومی ترجیح ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس حقیقت کو ذہن میں رکھتے ہوئے خطے میں کسی اضافے کو عدم تحفظ کے ذریعے سے تعبیر کیا جائے گا اور ایران اپنے دفاع کے لئے ہچکچاہٹ کا شکار نہیں ہوگا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق آبناے ہرمز سے تیل کی بلاتعطل اور محفوظ سپلائی کے لیے امریکا کی سربراہی میں ایک عالمی اتحاد تشکیل دیا جارہا ہے جس میں شمولیت کے لیے مبینہ طور پر اسرائیل نے بھی ہامی بھرلی ہے تاہم اسرائیل نے سرکاری سطح پر اس بات کی تردید یا تصدیق نہیں کی۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان عباس موسوی نے اسرائیل کے امریکی اتحاد کا حصہ بننے کی خبروں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ بات درست ہے تو ایران اسرائیلی اقدام کو ملکی تحفظ، سلامتی اور خود مختاری کے لیے دھمکی تصور کرے گا۔

ترجمان عباس موسوی نے مزید کہا کہ اسرائیل نے ایسی مذموم کوشش کی تو کارروائی کا حق محفوظ رکھتے ہیں، ملکی سلامتی اور خود مختاری کا تحفظ اولین ترجیح ہے جس پر کوئی سودے بازی نہیں ہوگی۔

واضح رہے کہ آبنائے ہرمز میں امریکی مفادات اور خلیجی ممالک سے آنے والے تیل بردار بحری جہازوں کی حفاظت کے لیے صدر ٹرمپ کی تجویز پر یورپی ممالک سمیت دیگر عالمی قوتوں پر مشتمل عالمی فوجی اتحاد بنانے پر غور کیا جا رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں