سعودی عدالت نے جمال خاشقجی کے اصل قاتلوں کو بری کردیا: ترکی

انقرہ (ڈیلی اردو) ترکی نے سعودی عرب کی ایک عدالت کی طرف سے صحافی جمال خاشقجی کے قتل میں ملوث ہونے کی پاداش میں سزائے موت دینے کے فیصلے کو مسترد کردیا ہے۔ انقرہ کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کی عدالت نے خاشقجی کے اصل قاتلوں کو بری کردیا اور نام نہاد ٹرائل کے ذریعے نامعلوم افراد کو سزائیں دے کر مجرموں کو تحفظ دیا جا رہا ہے۔

خیال رہے کہ صحافی جمال خاشقجی کو 2 اکتوبر 2018 کو انقرہ میں سعودی عرب کے قونصل خانے میں جانے کے بعد سعودی عرب سے آئے جلادوں نے بے دردی کے ساتھ قتل کرکے اس کی لاش غائب کردی تھی۔

سعودی عرب نے خاشقجی کے قتل کے جرم کو تسلیم کرتے ہوئے اس میں ملوث 11 افراد کے خلاف مقدمہ چلانے کا اعلان کیا تھا۔ حال ہی میں سعودی عرب کی سرکاری عدالت نے پانچ افراد کو خاشقجی قتل کیس میں قصور وار قرار دے کرانہیں سزائے موت دینے کی سفارش کی تھی۔

ترکی کے ایوان صدر کے ترجمان فرخر الدین الطون نے ایک بیان میں سعودی عدالت کے فیصلے کو مسترد کردیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ سعودی عدالت خاشقجی کے اصل قاتلوں کو بری کرنے کے بعد فرضی ناموں کا ٹرائل کرکے دنیا کو گمراہ کررہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عدالت نے نام نہاد مجرموں فرضی ٹرائل کے ذریعے مقدمہ چلانے کا اعلان کرکے دنیا کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش کی ہے۔ جن عہدیداروں نے خاشقجی کے قتل کے لیے جلادوں کی ٹیم استنبول بھیجی تھی انہیں تحفظ دیا جا رہا ہے۔ ان مجرموں نے خاشقجی کی لاش تک غائب کردی تھی۔

الطون کا مزید کہنا تھا کہ صحافی جمال خاشقجی کے اصل قاتلوں کو بری کردیا گیا اور وہ کھلے عام گھوم پھر رہے ہیں جب کہ ایک بے گناہ صحافی کے ٹکڑے ٹکڑے کرنے والوں کو بچا کر دنیا کو دھوکہ دینے کی بھونڈی کوشش کی جا رہی ہے۔

خیال رہے کہ سعودی عرب کی عدالت نے 23 دسمبر کو تین سینیر عہدیداروں کو خاشقجی کے قتل میں بری کرتے ہوئے پانچ کو سزائے موت اور تین کو قید کی سزا کا حکم دیا تھا۔ تاہم ان مجرموں کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں