صومالیہ: موغادیشو میں پولیس اسٹیشن پر خودکش حملہ، 6 اہلکار ہلاک

موغادیشو (ڈیلی اردو/اے پی/روئٹرز) صومالیہ میں حکومت کے خلاف سرگرم الشباب اسلامی گروپ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو میں ایک پولیس اسٹیشن کے سامنے ایک خود کش بمبار نے اپنے آپ کو دھماکے سے اڑا لیا جس کے نتیجے میں چھ پولیس اہلکار ہلاک ہوگئے۔ انتہاپسند گروپ الشباب نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

صومالی پولیس کے ترجمان میجر صادق عدن علی دودیشی نے نامہ نگاروں کو بتایا ”خودکش بم دھماکے میں وابیری ضلع پولیس کے کمانڈر سمیت چھ پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں جب کہ چھ دیگر پولیس اہلکار زخمی ہوئے ہیں۔” انہوں نے مزید بتایا کہ دو زخمیوں کی حالت نازک ہے۔

پولیس ترجمان نے کہا کہ خود کش حملہ آور کے جسم کے کچھ اعضاء ملے ہیں جن کا فورینزک لیب میں تجزیہ کیا جائے گا۔

الشباب نے ذمہ داری قبول کی

الشباب گروپ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے تاہم اس کا کہنا ہے کہ اتوار کے روز ہونے والے اس حملے میں پانچ پولیس اہلکار ہی ہلاک ہوئے۔

الشباب کی فوجی کارروائیوں کے ترجمان عبد الاسیس ابو معصب نے خبر رساں ایجنسی روئٹرز کو پیر کے روز بتایا ”ہمارا ہدف پولیس کمانڈروں کو ہلاک کرنا تھا اور اس حملے میں وابیری پولیس اسٹیشن کے کمانڈر سمیت پانچ پولیس اہلکاروں کو ہم نے ہلاک کر دیا۔”

الشباب سن 2008 سے ہی صومالیہ میں بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ مرکزی حکومت کو ہٹانے کے لیے جنگ لڑ رہی ہے۔ یہ انتہا پسند گروپ ملک میں اسلامی قوانین کی سخت تشریحات پر مبنی اپنا نظام قائم کر نا چاہتا ہے۔

الشباب کے جنگجو القاعدہ کے ساتھ مل کر دارالحکومت موغا دیشو اور صومالیہ میں دیگر علاقوں میں سکیورٹی فورسز پر اکثر حملے کرتے رہتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں