سینئر کشمیری حریت رہنما سید علی شاہ گیلانی انتقال کرگئے

سری نگر (ڈیلی اردو) بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے علیحدگی پسند رہنما سید علی شاہ گیلانی انتقال کرگئے۔

تفصیلات کے مطابق ممتاز کشمیری حریت رہنما سید علی شاہ گیلانی حیدر پورہ سری نگر میں اپنے گھر میں انتقال کر گئے۔

علیحدگی پسند لیڈر کے انتقال پر جموں و کشمیر کی سرکردہ شخصیات نے گہرے رنج و غم کا اظہار کیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق، سید علی شاہ گیلانی کے انتقال کی اہل خانہ نے بھی تصدیق کی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق سید علی شاہ گیلانی 92 سال کی عمر میں انتقال کر گئے ہیں وہ عرصے سے علالت کا شکار تھے جبکہ وہ کافی عرصے سے نظر بند تھے۔

سید علی شاہ کے انتقال پر جموں و کشمیر کی سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا، ’گیلانی صاحب کے انتقال کی خبر سے دکھ ہوا۔

سید علی شاہ گیلانی مقبوضہ کشمیر کے سیاسی رہنما کا تعلق ضلع بارہ مولہ کے قصبے سوپور سے تھا اور وہ مقبوضہ کشمیر کے پاکستان سے الحاق کے حامی تھے۔

بزرگ حریت رہنما سید علی گیلانی جماعت اسلامی جموں و کشمیر کے رکن رہے ہیں جبکہ انہوں نے جدوجہد آزادی کے لیے ایک الگ جماعت “تحریک حریت” بھی بنا رکھی تھی جو کل جماعتی حریت کانفرنس کا حصہ ہے۔ بزرگ حریت رہنما سید علی گیلانی معروف عالمی مسلم فورم “رابطہ عالم اسلامی” کے رکن تھے۔

حریت رہنما یہ رکنیت حاصل کرنے والے پہلے کشمیری حریت رہنما تھے۔ ان سے قبل سید ابو الاعلی مودودی اور سید ابو الحسن علی ندوی جیسی شخصیات برصغیر سے “رابطہ عالم اسلامی” فورم کی رکن رہ چکی ہیں۔

سید علی گیلانی مجاہد آزادی ہونے کے ساتھ ساتھ وہ علم و ادب سے شغف رکھنے والی شخصیت بھی ہیں اور علامہ اقبال کے بہت بڑے مداح تھے۔ وہ اپنے دور اسیری کی یادداشتیں ایک کتاب کی صورت میں تحریر کر چکے ہیں جس کا نام “روداد قفس” ہے۔ اسی وجہ سے انہوں نے اپنی زندگی کا بڑا حصہ بھارتی جیلوں میں گزارا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں