پاکستان کے خلاف نعرہ بازی کرنے والے افغان مہاجرین کو فوری  ملک بدر کرنے کا حکم

 اسلام آباد (ڈیلی اردو) پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے پاکستان میں مقیم افغان مہاجرین کو کیمپوں تک محدود کرنے اور پاکستان کے خلاف نعرہ بازی کرنے والے افغانیوں کو فوری طور پر ملک بدر کرنے کی ہدایت کی ہے۔

کمیٹی نے شارجہ کرکٹ سٹیڈیم میں ہلڑ بازی کرنے والے 390 افغان شہریوں کے پاس پاکستانی پاسپورٹ موجود ہونے کے انکشاف پر ایف آئی اے اور وزارت داخلہ سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

بدھ کے روز پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اجلاس چیئرمین نور عالم خان کی سربراہی میں پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوا اجلاس میں کمیٹی اراکین، سیکرٹری داخلہ، سیکرٹری قانون و انصاف، چیئرمین سی ڈی اے چیئرمین نادرا آڈٹ اور نیب حکام نے شرکت کی۔

اجلاس کے دوران چیرمین کمیٹی نے کہا کہ افغان مہاجرین کب تک ہمارے سروں پر بیٹھے رہیں گے وہ پاکستان میں کئی دہائیوں سے مقیم ہیں اور پاکستان کے خلاف نعرے لگاتے ہیں۔

 کمیٹی کی رکن شاہدہ اختر علی نے کہا کہ افغانیوں کی تیسری نسل بھی پاکستان میں موجود ہے اسلام آباد میں پریس کلب کے سامنے بیٹھے ہوئے ہیں بتایا جائے کہ اس حوالے سے انکوائری کا کیا ہوا ہے۔

 کمیٹی کے رکن برجیس طاہر نے کہا کہ افغان مہاجرین کو واپس بھجوایا جائے چیرمین کمیٹی نے کہا کہ ہم سے غلطیاں ہوئی ہیں افغان مہاجرین کو کیمپوں تک محدود کیوں نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان مردہ باد کا نعرہ لگانے والے کو فوری طور پر ملک سے نکالا جائے۔

 سیکرٹری داخلہ نے کہا کہ افغان مہاجرین کے حوالے سے ہماری پالیسیاں اچھی نہیں رہی ہیں اس وقت پورے ملک میں افغان مہاجرین موجود ہیں اس حوالے سے کمیٹی کی ہدایات پر عمل کیا جائے گا۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ 40 سالوں تک افغان مہاجرین کی خدمت کی ہے اب وہ واپس اپنے گھروں کو چلے جائیں یا پھر ان کو کیمپوں تک محدود کیا جائے کمیٹی کے رکن احمد حسن دیہڑ نے کہا کہ افغان مہاجرین کو پاکستانی شناختی کارڈ جاری کئے گئے ہیں اس کی تحقیقات کی جائیں۔

کمیٹی کے رکن سینیٹر سلیم مانڈی والا ہے کہا کہ شارجہ میں کرکٹ میچ کے دوران ہنگامہ آرائی کرنے والوں کے پاس پاکستانی پاسپورٹ تھے ان کے خلاف کیا کارروائی کی گئی ہے۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ جن افغانیوں نے ہنگامہ آرائی کی ہے ان کی تفصیلات کمیٹی کو فراہم کی جائیں۔

 کمیٹی کے رکن شیخ روحیل اصغر نے کہا کہ افغان مہاجرین کو واپس بھجوایا جائے چیرمین کمیٹی نے وزارت داخلہ اور سیفران کو ہدایت کی کہ تمام افغانیوں کو کیمپوں تک محدود کیا جائے اور ان کے کاروبار پر پابندی عائد کی جائے۔

 انہوں نے کہا کہ کراچی میں جو بھی جرائم ہوتے ہیں ان میں افغانی ملوث ہوتے ہیں اس موقع پرآئی جی اسلام آباد نے کہا کہ کہ جو افغانی پاکستان میں پیدا ہوئے ہیں کہ وہ مہاجر نہیں ہیں تاہم ان کے اسٹیٹس کے بارے میں وزارت داخلہ بتا سکتی ہے۔

 چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ کی وزارت کو ایک مہینے کا ٹائم دیتے ہیں کہ اس حوالے سے اقدامات کئے جائیں سیکرٹری داخلہ نے کہا کہ افغان مہاجرین کو بین القوامی قوانین کی وجہ سے واپس نہیں بھجوایا جاسکتا ہے۔

 پاکستان میں 14 لاکھ رجسٹرڈ افغان مہاجرین موجود ہیں ہم ان پر دباؤ نہیں ڈال سکتے ہیں ہم یہ مسائل یو این ایچ سی آر کے ساتھ اٹھائیں گے کمیٹی نے یو اے ای سے نکالے جانے والے 390 افغانیوں کی فہرست فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

 اس موقع پر چیئرمین نادرا نے کہا کہ افغان مہاجرین کو پی او آر کارڈز جاری کئے گئے ہیں بلوچستان کے سرحدی اضلاع میں آمد و رفت کرنے والے آفغان مہاجرین کی بائیو میٹرک ویری فیکیشن کی جاتی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ جن افغانیوں نے پاکستانی شناختی کارڈ بنانے ہیں ان کی تفتیش کی جارہی ہے جس پر چیرمین کمیٹی نے کہا کہ بہت سے افغانیوں نے پاکستانی شناختی کارڈ بنائے ہیں جس پر چیئرمین نادرا نے کہا کہ اگر آپ کے پاس اس حوالے سے تفصیلات ہیں یہ تو حساس معاملہ ہے ہمیں فراہم کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں