لکی مروت میں نامعلوم مسلح افراد کی گاڑی پر فائرنگ، پولیس اہلکار 3 بھانجوں سمیت ہلاک

ٹانک (ڈیلی اردو) صوبہ خیبرپختونخوا کے ضلع لکی مروت میں کرم ٹول پلازہ کے قریب پولیس اہلکارکی گاڑی پر نامعلوم افراد کی فائرنگ کے نتیجے میں 4 افراد ہلاک ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق لکی مروت میں پولیس اہلکار کی گاڑی پر فائرنگ کے نتیجے میں کار میں موجود تین بچے اور پولیس اہلکار زخمی ہوئے، جنہیں فوری طور پر ہسپتال منتقل کیا گیا لیکن وہ جانبر نہ ہوسکے۔

پولیس نے بتایا ہے کہ لکی مروت انڈس ہائی وے پر کرم ٹول پلازہ کے قریب نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نےچلتی موٹر کار پر فائرنگ کی، گاڑی میں سوار 2 خواتین معجزانہ طور پر محفوظ رہیں۔

پولیس کے مطابق مقتول کی شناخت سعد اللہ خان تترخیل کے نام سے ہوئی، جو لکی مروت پولیس کے سابقہ ایم ٹی او تھے، جبکہ ہلاک ہونے والوں بچوں کی عمریں 8 سے 12 سال کے درمیان تھیں جو سعداللہ خان کے بھانجے تھے۔

پولیس کے مطابق سعد اللہ خان موٹر کار میں خواتین اور بچوں سمیت علاج معالجے کی غرض سے پشاور جارہے تھے، انڈس ہائی وے پر وائلڈ لائف دفتر کے قریب نامعلوم افراد نے ان کی گاڑی پر فائرنگ کردی جس سے سعد اللہ تین بچوں سمیت ہلاک ہوگئے، جب کہ خواتین خوش قسمتی سے محفوظ رہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ چاروں لاشوں کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے، ملزمان فائرنگ کے بعد باآسانی فرار ہو گئے، جائے وقوع سے شواہد اکٹھے کیے جا رہے ہیں، ملزمان کی گرفتاری کے لیے علاقے میں سرچ آپریشن جاری ہے۔

دوسری جانب، وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا علی امین خان گنڈاپور نے فائرنگ کے واقعے میں بچوں سمیت پولیس اہلکار کے ہلاکت پر افسوس اور سوگوار خاندان سے دلی ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کیا۔

وزیراعلیٰ نے پولیس کو فائرنگ میں ملوث عناصر کی گرفتاری کیلئے ضروری اقدامات کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ واقعہ انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ہے، ملوث عناصر قانون کی گرفت سے بچ نہیں سکتے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں