151

شہید بیٹے کی تدفین میں شرکت: نیوزی لینڈ پہنچنے والی ماں بھی چل بسی

کرائسٹ چرچ (ڈیلی اردو) نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں پیش آنے والے اندوہناک سانحہ میں شہید ہونے والے اردن کے شہری کی ماں بیٹے کی جدائی کا غم برداشت نہ کرسکیں اور دل کا دورہ پڑنے سے انتقال کرگئیں۔

نیوزی لینڈ کے مو¿قر اخبار’ نیوزی لینڈ ہیرالڈ‘ کی رپورٹ کے مطابق 38 سالہ کامل درویش کی آخری رسومات میں شرکت کےلئے ان کی 64 سالہ والدہ جمعہ کے دن نیوزی لینڈ پہنچی تھیں لیکن نماز جنازہ سے قبل ہی دل کا دورہ پڑنے سے انتقال کرگئیں۔

اخبار کے مطابق اردن کے سفارتخانے نے مساجد حملے میں شہید ہونے والے فلسطینی نژاد اردنی شہری کامل درویش کی والدہ کے انتقال کی تصدیق کی ہے۔

کامل درویش کی والدہ کی میت کو اردن منتقل کرنے کے انتظامات کیے جارہے ہیں۔ نیوزی لینڈ ہیرالڈ کے مطابق کامل درویش چھ ماہ قبل ہی نیوزی لینڈ آئے تھے۔ اردن میں ان کے تین بیٹے اور بیوہ موجود ہیں۔

ڈیری فارمنگ کے شعبے سے وابستہ کامل درویش اپنے بھائی کے ساتھ کام کرنے کے ارادے سے نیوزی لینڈ منتقل ہوئے تھے۔شہادت سے قبل 38 سالہ کامل درویش نے بیوی بچوں کے ویزے کیلئے درخواست بھی جمع کرائی تھی۔

کرائسٹ چرچ میں واقع دو مساجد میں نماز جمعہ کی ادائیگی سے قبل جب حملہ آورنے اندھا دھند گولیاں برسائیں تو 50 افراد شہید ہوگئے تھے۔ اس سانحے میں درجنوں افراد زخمی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں